پیر روشان

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
بایزید انصاری
بایزید انصاری

معلومات شخصیت
پیدائش سنہ 1515  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں تاریخ پیدائش (P569) ویکی ڈیٹا پر
جالندھر  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں مقام پیدائش (P19) ویکی ڈیٹا پر
وفات سنہ 1585 (69–70 سال)  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں تاریخ وفات (P570) ویکی ڈیٹا پر
تربیلا  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں مقام وفات (P20) ویکی ڈیٹا پر
شہریت Fictional flag of the Mughal Empire.svg مغلیہ سلطنت  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں شہریت (P27) ویکی ڈیٹا پر
نسل پشتون
آبائی علاقہ کنگرام, وزیرستان
مذہب اسلام
اولاد شیخ عمر
پیر جلالہ
والدین شیخ عبداللہ[1]
عملی زندگی
پیشہ شاعر،الٰہیات دان،بیوپاری  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں پیشہ (P106) ویکی ڈیٹا پر
پیشہ ورانہ زبان پشتو  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں زبانیں (P1412) ویکی ڈیٹا پر
شعبۂ عمل اسلامی الٰہیات،تجارت  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں شعبۂ عمل (P101) ویکی ڈیٹا پر

بایزید خان، (1582/1585 - 1525) جن کو پیر روشان یا پیر روخان کے نام سے جانا جاتا ہے، پشتون جنگجو، شاعر اور دانشور تھے۔ ان کا تعلق باراک/اورمڑ (جسے آج کل برکی قبیلے سے جانا جاتا ہے) قبیلے سے تھا۔ ان کی مادری زبان پشتو تھی۔ آپ کی پیدائش پنجاب کے علاقے جالندھر میں ہوئی مگر آپ کے والدین ان کے بچپن میں جنوبی وزیرستان کے علاقے کانیگرم ہجرت کر گئے، جو آج برکی قبائل کا گڑھ سمجھا جاتا ہے۔
بایزید خان، جو پیر روشان کے نام سے مشہور ہوئے، اپنے نقطہ نظر اور مضبوط صوفی سوچ کی وجہ سے جانے جاتے تھے اور ان کا نظریات کا خطہ کے غیر معمولی حالات اور اوقات میں گہرا اثر دیکھا گیا۔ پیر روشان کا تعلق برکی قبیلے سے تھا، جس کے بارے میں مشہور ہے کہ ان کا تعلق عربوں میں انصاریوں کے ساتھ جا ملتا ہے، مگر ایک انگریز مصنف ہینری والٹر بیلیو نے اپنی ایک تصنیف میں بایزیدی لوگوں بارے لکھا ہے کہ ان کو برکی کہا جاتا ہے جو بیسیویں صدی کے شروع تک باراک یا باراکی کہلاتے تھے اور وزیرستان کے علاقے میں ان کی بڑی آبادیاں موجود تھیں۔ یہ لوگ یونانیوں کے زمانے سے یہاں آباد تھے۔ مزید تفصیلات میں ہینری والٹر نے اس حوالے سے بتایا ہے کہ برکی قبائل کے اوائل زمانہ کے حالات کسی کو معلوم نہیں ہیں اور ان کے آباؤاجداد بہرحال عرب یا انصاری نہیں ہیں۔
پیر روشان، اپنے صوفی نظریات اور انتہائی پُراثر خیالات کی وجہ سے جانے جاتے ہیں اور ان کے یہ نظریات اپنے وقت میں اس خطے کے غیر معمولی حالات پر شدید اثرانداز ہوئے۔ دوسرے پشتون قبائل کی طرح برکی بھی قبائلی آزادی کے حامی ہیں اور اس طرح ان کے مرکزی علاقے کانیگرم کی اہمیت بڑھ گئی اور قبیلے کے لیے تاریخ میں اس مقام کو اہمیت حاصل ہے۔ اس کے علاوہ یہ قبیلہ اپنی پہچان مادری زبان اورمار کی صورت بھی زندہ رکھنا چاہتا تھا، جس پر پشتو کے گہرے اثرات مرتب ہو رہے تھے۔
پیر روشان، جو بایزید خان کی پہچان بنا، پشتو زبان کا لفظ ہے جس کہ مطلب “روشن خیال پیر“ یا “روشنی سے منور پیر“ کے ہیں۔ مغل سلطنت کے بادشاہ جلال الدین محمد اکبر کے خلاف پشتونوں کی مہم جو تحاریک میں سب سے پہلے پیر روشان نے اپنے دستے کی سپہ سالاری کی۔
پیر روشان اعلیٰ تعلیم کے حصول اور خواتین کے لیے یکساں حقوق کے حامی تھے۔ یہ اس وقت کے مطابق اور یہاں تک آج بھی جنوبی وزیرستان میں انتہائی انقلابی سوچ سمجھی جا سکتی ہے۔ جنوبی وزیرستان میں اپنے آبائی علاقے کانیگرم سے انھوں نے ایک تحریک “روشنیا تحریک“ کا آغاز کیا، جو شہنشاہ کے خلاف شروع ہوئی اور اس کا بیڑا بعد ازاں پیر روشان کے بچوں، پوتوں اور ان کے بچوں تک نے اٹھایا۔ یہ تحریک تقریباً ایک صدی تک جاری رہی۔
انیسویں صدی میں تاریخ دان، جنھوں نے پشتو زبان اور دوسرے علاقائی حوالوں سے جب نظریات پیر روشان کے تراجم کیے تو ان کی تحریک کو باقاعدہ ایک فرقے کے طور پر پیش کر دیا، جو ایک فاش غلطی تھی اور یہ غلطی آج تک، یہاں تک کہ یورپی محققین تک دہرا رہے ہیں۔ اس تحریک کا بنیادی مقصد مردوں اور عورتوں میں برابری کی سطح کے نظریات کو پروان چڑھانا تھا، جس میں عورتوں اور مردوں کو اعلیٰ تعلیم حاصل کرنے کے مواقع تک رسائی دلانا ضروری نکتہ تھا۔ اس تحریک کے باقی مقاصد میں مغل بادشاہ، جلال الدین محمد اکبر کے بنائے ہوئے دین الہیٰ کے خلاف جہاد کرنا بھی شامل تھا۔

مزید دیکھیے[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

  • نقاطی فہرست کی مَد
  • [7-A] امین اللہ گنڈہ پور; تاریخ سرزمین گومل نیشنل بک فاؤنڈیشن، اسلام آباد; 2008ء ; صفحہ - 61
  • [8-A]امین اللہ گنڈہ پور، باب:- 4, صفحہ:- 55
  • تاریخ سرزمین گومل،(Urdu) امین اللہ گنڈہ پور; نیشنل بک فاؤنڈیشن، اسلام آباد۔ 2008ء
  1. E.J. Brill's First Encyclopaedia of Islam 1913-1936, Volume 9۔ Houtsma, M Th۔ BRILL۔ 1987۔ صفحہ 686۔ آئی ایس بی این 9004082654۔ اخذ کردہ بتاریخ August 11, 2013۔ 

بیرونی روابط[ترمیم]

  • [1] پیر روشان ویکی میر پر